گاندھی جی کے قتل سے صرف کانگریس کو فائدہ ہوا تھا: اوما بھارتی

گاندھی جی کے قتل سے صرف کانگریس کو فائدہ ہوا تھا: اوما بھارتی

مرکزی وزیر اور بی جے پی کی شعلہ بیان خاتون اوما بھارتی نے پھر ایک متنازعہ بیان دیتے ہوئے کہا کہ مہاتما گاندھی کے قتل سے صرف کانگریس کو فائدہ ہوا تھا اور یہ قابل غور ہے کہ گوڈسے کو ان کے خلاف اور ان کا قتل کرنے کیلئے کس نے اکسایا تھا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ناتھو رام گوڈسے نے گاندھی جی کو قتل کیوں کیا یہ آج تک واضح نہیں ہے اور اسے ان کے خلاف کرنے اور اکسانے کا کام وہی کرسکتا تھا جسے گاندھی جی کے جینے سے نقصان یا خطرہ ہو اور ایسا کانگریس کے ساتھ ہی تھا۔ محترمہ بھارتی نے گجرات اسمبلی انتخابات کی تشہیر کے دوران نامہ نگاروں سے کہا کہ گاندھی جی کے قتل سے سب سے زیادہ نقصان ہندوستان کو ہوا کیونکہ اس کا رہنما کھو گیا۔ دوسرے نمبر پر سنگھ (آر ایس ایس) اور جن سنگھ (بی جے پی کا پرانا نام) کو نقصان ہوا کیونکہ ان پر پابندی اور الزام لگے اور آج تک الزامات لگتے ہیں۔ کانگریس نے تو عدالت سے بری ہونے کے باوجود ہم پر الزام لگانا نہیں چھوڑا۔محترمہ اوما بھارتی نے کہا کہ گاندھی جی کے قتل سے صرف کانگریس کو فائدہ ہوا کیونکہ تب گاندھی جی کی کانگریس میں دلچسپی ختم ہوچکی تھی اور وہ عوامی طورپر اس کو ختم کرنے کی بات کررہے تھے اور کسی بھی وقت اس کا اعلان کرسکتے تھے۔ اس لئے ان کے قتل سے کسی کو زندگی ملی، فائدہ ملا تو وہ صرف کانگریس ہے۔ گاندھی جی کچھ دن مزید رہ گئے ہوتے تو کانگریس کو ختم کردیا ہوتا اور نیا سیاسی نظام بنا دیا ہوتا۔ اس لئے یہ تو آج بھی قابل غور موضوع ہے کہ گوڈسے کو ان کے خلاف کس نے اکسایا۔ کیونکہ گاندھی جی کے قتل کی بات وہی سوچ سکتا ہے جسے ان کے جینے سے خطرہ ہو اور ایسا کانگریس کے ساتھ تھا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی کی حکومت بننے کے بعد سے گاندھی جی کے نظریات کو پھر سے قائم کرنے کی کوشش ہورہی ہے۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے یہ بھی کہا کہ مسٹر مودی نے ملک میں سیکولرازم کو نئے معنی دیئے ہیں۔ نہرو جی کے وقت سے اس کا ایک ہی مطلب نکالا جاتا تھا جسے بائیں بازو نے بھی بڑھاوا دیا اور وہ تھا ہندوؤں سے نفرت۔ اب مسٹر مودی نے تمام مذاہب کے احترام کے ساتھ اسے نیا مطلب دیا ہے اور اسی کے سبب اب کانگریس (اس کے نائب صدر راہل گاندھی پر بالواسطہ طورپر اشارہ کرتے ہوئے) کو بھی مندروں کے چکر لگانے پڑ رہے ہیں۔ گجرات انتخابات کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ امت شاہ جی نے بی جے پی کو 150سیٹیں ملنے کی بات کہی ہے پر انہیں تو 160سے بھی زیادہ (مجموعی طورپر 182میں سے) سیٹیں ملتی نظر آرہی ہیں۔ کانگریس کی حالت کٹی پتنگ جیسی ہوجائے گی۔ وہ راہل گاندھی کے کسی بیان کے بارے میں کوئی تبصرہ نہیں کرنا چاہتیں کیونکہ ان کی قیادت میں کانگریس کی بدحالی بہت کچھ کہہ رہی ہے۔