لاپتہ ہوئے ایک سال گزر گیا ، جے این یو طالب علم نجیب کی کوئی خبر نہیں

 لاپتہ ہوئے ایک سال گزر گیا ، جے این یو طالب علم نجیب کی کوئی خبر نہیں

جے این یو کے لاپتہ طالب علم نجیب کو غائب ہوئے ایک سال ہو گیا ہے۔ گزشتہ سال 15 اکتوبر سے نجیب یونیورسٹی کے ماہی-مانڈوی ہاسٹل سے غائب ہے۔کئی طالب علم الزام لگاتے ہیں کہ 14 اکتوبر کو جے این یو کے ماہی-مانڈوی ہاسٹل میں مبینہ طور پر اے بی وی پی کے لوگوں نے ایم ایس سی بایوٹیک کے طالب علم نجیب کی بری طرح پٹائی کر دی تھی۔ اس معاملے میں دہلی ہائی کورٹ نے سی بی آئی جانچ کا حکم دے دیا لیکن اب تک لاپتہ نجیب کی کوئی خبر نہیں ہے۔ نجیب کی ماں فاطمہ نفیس نے سی بی آئی جانچ کا حکم ہونے پر خوشی ظاہر کی تھی لیکن اس سے بھی اب تک کوئی نتیجہ نہ نکلنے کی وجہ سے وہ اب مایوس ہیں۔معاملہ نے سیاسی رنگ بھی لیا۔ سابق جے این یو ایس یو کی نائب صدر شہلا رشید نے کہا تھا کہ عدالت نے سی بی آئی انکوائری کا حکم اس لئے دیا تھا کیونکہ اسے دلی پولیس کے سیاسی طور پر استعمال کرنے کا اندیشہ تھا۔ اس کے علاوہ، ششی تھرور، اروند کیجریوال اور سیتا رام یچوری جیسے رہنماؤں نے بھی نجیب کے خاندان کے ساتھ یکجہتی ظاہر کی تھی۔