مولانا سلمان حسینی ندوی کے خلاف کاروائی تقریبا طے ، چار رکنی کمیٹی کی تشکیل: مسلم پرسنل لا بورڈ اجلاس

مولانا سلمان حسینی ندوی کے خلاف کاروائی تقریبا طے ، چار رکنی کمیٹی کی تشکیل: مسلم پرسنل لا بورڈ اجلاس

بابری مسجد - ایودھیا تنازعہ کے ضمن میں بورڈ کے موقف کے برخلاف مولانا سید سلمان حسینی ندوی رکن عاملہ مسلم پرسنل لاء بورڈ کے اقدام پر بورڈ کی جانب سے اس کا جائزہ لینے اور ان کے خلاف کاروائی کرنے کے لئے ایک چار رکنی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔ اس چار رکنی کمیٹی میں بورڈ کے صدر مولانا سید رابع حسینی ندوی‘ جنرل سکریٹریز مولانا سید محمد ولی رحمانی‘ مولانا خالد سیف اللہ رحمانی اور رکن عاملہ مولانا ارشد مدنی کو شامل کیا گیا ہے۔مسلم پرسنل لاء بورڈ کے سہ روزہ اجلاس کے دوسرے دن بورڈ کے ارکان عاملہ جناب قاسم رسول الیاس اور جناب کمال فاروقی کی جانب سے اس سلسلہ میں بورڈ سے درخواست کی گئی کہ مولانا سلمان حسینی ندوی کے متنازعہ اقدام کے خلاف کاروائی کی جائے اس سے بورڈ کی کارکردگی اور تشخص پر سوالات اٹھ رہے ہیں۔ اس مطالبہ پر بورڈ کی جانب سے چار رکنی کمیٹی قائم کی گئی ہے تاکہ وہ مولانا سلمان حسینی ندوی کے متنازعہ اقدام اور بیانات کا جائزہ لے سکے۔بورڈ کے بعض ارکان کی جانب سے یہ مطالبہ کیا جارہا ہے کہ سزا کے طور پر انہیں بورڈ سے معطل کیا جائے یا ان کے خلاف سخت کاروائی کی جائے۔ بعض ارکان کا یہ کہنا تھا کہ اگر انہیں معطل کیا جائے تو اس سے میڈیا کی تمام تر توجہ ان کی جانب مبذول ہوجائے گی اور ہر مسئلہ پر ان سے رائے طلب کی جائے گی۔ اس لئے سوچ سمجھ کر قدم اٹھایا جائے۔مولانا سلمان حسینی ندوی ‘ جنہوں نے بورڈ کے سہ روزہ اجلاس کے پہلے دن ارکان عاملہ کے اجلاس میں شرکت کی تھی۔ عاملہ کے اجلاس میں ان کی شرکت پر بعض ارکان نے اعتراض کیا بلکہ جناب قاسم رسول الیاس اور جناب کمال فاروقی نے عاملہ کے اجلاس میں زبردست احتجاج درج کروایا تھا۔ اس کے بعد بورڈ کے اجلاس کے دوسرے دن مولانا سلمان حسینی ندوی غیر حاضر رہے۔ بعض ذرائع نے بتایا کہ انہوں نے بورڈ کے دوسرے دن کے اجلاس کا بائیکاٹ کردیا۔