مولانا اصغر علی مہدی سلفی: مولانا آزاد کا تصور امن و انسانیت اسلامی تعلیمات کی طرح ہمہ گیر تھا

مولانا اصغر علی مہدی سلفی: مولانا آزاد کا تصور امن و انسانیت اسلامی تعلیمات کی طرح ہمہ گیر تھا

مولانا آزاد کی زندگی کا ہر پہلو روشن اور ہر گوشہ آفتاب و مہتاب تھا۔ وہ صحیح معنوں میں محی الدین ، ابوالکلام اور آزاد تھے۔ ان خیالات کا اظہار مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی امیر مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند نے کیا۔انہوں نے ساتھ ہی کہا کہ وہ اپنے زمانہ میں قرآن کریم سیرت طیبہ اور اسلامی تعلیمات کے سب سے بڑے امین تھے۔ اگر دینی مدارس مولانا آزاد کی زندگی کو جھانک کر کے بھی دیکھ لیں تو آج مدارس کا علمی و فکری انحطاط ختم ہو جائے۔موصوف آج آئی سی سی آر، آزاد بھون نئی دہلی میں مولانا آزاد اکیڈمی نئی دہلی کے زیر اہتمام دو روزہ قومی سیمینار بعنوان ’’مولانا آزاد ۔ ایک تجزیاتی مطالعہ‘‘کے آخری اجلاس میں صدارتی خطاب کر رہے تھے۔مولانا نے مزید کہا مولانا آزاد کا تصور امن و انسانیت اسی قدر ہمہ گیر تھا جس قدر کہ اسلامی تعلیمات کی ہمہ گیر ی ۔وہ ایک صائب الرائے اور عبقری شخصیت کے مالک تھے۔مولانا آزاد اکیڈمی کے جنرل سکریٹری مولانا مفتی عطاء الرحمن قاسمی نے یہ سیمینار منعقد کر کے ملت کے سر سے مولانا آزاد کا قرض اتارنے کی مبارک کوشش کی ہے۔ اس کے لئے مولانا ہمارے شکریہ کے مستحق ہیں۔آج پہلی نشست کی صدارت کرتے ہوئے پروفیسر عزیزالدین حسین ہمدانی سابق ڈائرکٹر رامپور رضاء لائبریری نے کہا مولانا آزاد نے تاریخ کی اساس کو مآخذ اور سائنٹفک بنیاد پر استوار کیا اور کہا کہ اس میں جذباتیت نہیں ہونی چاہئے ۔مولانا آزاد نے عرب مفکرین کی آراء و معارف کو آگے بڑھانے کی کوشش کی۔ مولانا عطاء الرحمن قاسمی ہمارے شکریہ کے مستحق ہیں کہ انہوں نے مولانا آزاد کو جاننے اور سمجھنے کا ہمیں موقع عنایت کیا ہے۔