بی جے پی لیڈر ہما مالنی کا متنازع بیان ، آبادی کو بتایا ذمہ دار: ممبئی کملا ملس سانحہ

بی جے پی لیڈر ہما مالنی کا متنازع بیان ، آبادی کو بتایا ذمہ دار: ممبئی کملا ملس سانحہ

ممبئی میں لوور پریل علاقہ میں جمعرات اور جمعہ کی دیر رات بھیانک آگ لگ گئی ۔ کملا ملس کمپاونڈ میں واقع بسٹرو لاونج میں لگی اس آگ میں تقریبا 14 افراد کی موت ہوگئی جبکہ 23 سے زیادہ لوگ زخمی ہوئے ہیں۔ مرنے والوں میں 11 خواتین شامل ہیں۔ زیادہ تر خواتین کی لاشیں واش روم سے برآمد ہوئی ہیں ۔ اس بھیانک سانحہ کے بعد سے بیان بازیوں کا دور بھی شروع ہوگیا ہے۔بی جے پی کی ممبر پارلیمنٹ اور بالی ووڈ اداکارہ ہیما مالنی نے متنازع بیان دیا ہے ۔ انہوں نے کملا ملس میں آتشزدگی کیلئے ایک طرح سے ممبئی کی بڑھتی آبادی کو ذمہ دار قرار دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ تعمیر سے پہلے جانچ کی جانی چاہئے کہ آمد و رفت کا راستہ ہے یا نہیں ۔ ممبئی کے اندر ایک اور ممبئی بنائی جارہی ہے ۔ ایک شہر کے بعد دوسرے شہر کی ترقی کی جانی چاہئے ، آبادی کو کنٹرول کرنے کے بارے میں بھی سوچنا چاہئے۔ادھر بی ایم سی کے میئر وشوناتھ مہادیشور نے بھی متنازع بیان دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ کافی بڑا سانحہ ہے ۔ کئی لوگوں کی جانیں تلف ہوگئی ہیں ، سانحہ کی اعلی سطحی جانچ کا حکم دیا گیا ہے ، کوئی بھی افسر ہو ، اس کے خلاف کارروائی ہونی چاہئے ۔تاہم جانچ کے بعد ہی پتہ چل سکے گا کہ اس کیلئے کون ذمہ دار ہے ، سب کچھ دیکھنا میرے لئے ممکن نہیں ہے ، ہم سبھی جگہ نہیں ہوسکتے۔ادھر اس معاملہ پر شیو سینا کے ممبر پارلیمنٹ اروند ساونت اور بی جے پی لیڈر کریٹ سومیا کے درمیان جمعہ کو پارلیمنٹ میں بھی تیکھی بحث ہوئی ۔ بی جے پی ممبر پارلیمنٹ نے لوک سبھا میں یہ معاملہ اٹھاتے ہوئے مطالبہ کیا کہ حکومت سبھی پب اور یستوراں کا فائر آڈٹ کروائے ۔ انہوں نے بی ایم سی پر نشانہ سادھتے ہوئے کہا کہ وہاں بدعنوان افسران ان سب کیلئے ذمہ دار ہیں ، وہ جانیں کہ کیسے لائسنس دیتے ہیں۔اس کے جواب میں اس حلقہ کے شیو سینا ممبر پارلیمنٹ اروند ساونت نے سومیا پر دخل اندازی کا الزام لگایا ۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ پورے واقعہ کی عدالتی جانچ کی جائے ۔ صرف اس سانحہ کی ہی نہیں بلکہ ایسی جنتی بھی ملس ہیں جہاں کمرشیل اور ریزیڈنشیل کمپلیکس ہیں ، ان کا لائسنس کیسے جاری کیا گیا ، اس کی جانچ ہونی چاہئے ۔ ساونت نے سومیا کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ان کے دوستوں کے ہی وہاں ریستوراں ہیں ۔ انہوں نے الزام لگایا کہ کئی بڑے لیڈروں اور افسروں کے ہی پب اور ریستوراں ہیں۔دریں اثنا ممبر پارلیمنٹ جیا بچن نے کہا ہے کہ میں کملا ملس گئی ہوں ،وہ ایک بھول بھلیا جیسا ہے، وہاں بہت سارے راستے ہیں ۔بندوبست کیا جانا چاہئے تھا ۔ یہ شرمناک ہے ، وہ کمرشیل ایریا ہے ، لائسنس دینے کے بعد بھی چیکنگ کی جانی چاہئے ، جو ریستوراں چلا رہے ہیں ، ان کی بھی ذمہ داری ہے ، جان تو چلی گئی اب آپ کارروائی کرتے رہئے ۔