کرناٹک میں دلت لیڈروں نے روکی امت شاہ کی تقریر، جم کر ہنگامہ آرائی اور نعرے بازی

کرناٹک میں دلت لیڈروں نے روکی امت شاہ کی تقریر، جم کر ہنگامہ آرائی اور نعرے بازی

کرناٹک میں بی جے پی صدر امت شاہ کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ پہلے تو تقریر کے دوران ان کی زبان پھسل گئی اور وہ یدی یورپا کو سب سے زیادہ بدعنوان وزیر اعلی کہہ بیٹھے ، اس کے بعد ان کی ریلی میں مترجم نے بڑی غلطی کردی ۔ اب جمعہ کو شاہ کے پروگرام کے دوران دلت لیڈروں نے بی جے پی ممبر پارلیمنٹ کے بیان کی مخالفت میں نعرے بازی کی۔ انہوں نے شاہ کو بولنے نہیں دیا۔دلت لیڈروں نے مرکزی وزیر اننت کمار ہیگڑے کے دلت مخالف بیان کے خلاف شاہ سے شکایت کی۔ انہوں نے بی جے پی صدر سے پوچھا کہ وہ ممبر پارلیمنٹ کے خلاف کیا کارروائی کریں گے ، جس پر شاہ نے خود کو اور پارٹی کو اس بیان سے الگ کرلیا۔ انہوں نے کہا کہ ہیگڑے کے تبصرہ سے بی جے پی اتفاق نہیں رکھتی ہے۔ اسی درمیان کرناٹک بی جے پی نے پروگرام کے دوران ہنگامہ کیلئے وزیر اعلی سدا رمیا کو ذمہ دار ٹھہرایا ہے۔کرناٹک بی جے پی نے ٹویٹ میں کہا کہ ملک میں بی جے پی کے دلتوں کی پسندیدہ پارٹی بننے کو ہضم نہیں کرپانے کی وجہ سے وزیر اعلی سدا رمیا نے یہ کام کیا ہے۔ انہوں نے امت شاہ کے پروگرام میں اپنے غنڈے بھیجے۔ادھر لنگایت کمیونٹی پر رسائی کی بی جے پی کی کوششیں جاری رکھتے ہوئے پارٹی صدر امت شاہ نے جمعہ کو ستور مٹھ میں کمیونٹی کے ایک اہم سنت سے ملاقات کی اور کرناٹک دورہ کے چوتھے مرحلہ کا آغاز کیا۔ شاہ نے سنت سے ملنے کے بعد ٹویٹر پر لکھا کہ شری ستور مٹھ کے مہاسوامی جی سے میسور میں آشیرواد لیا۔ سنت نے دنیا بھر میں ہندوستانی تہذیب و ثقافت کی تشہیرکرنے کیلئے اہم کوششیں کی ہیں۔