اورنگ آباد تشدد کا اہم ملزم انل سنگھ چلاتا ہے ہندو یوا تنظیم ، کئی دیگر مذہبی تنظیموں سے بھی ہے وابستہ

اورنگ آباد تشدد کا اہم ملزم انل سنگھ چلاتا ہے ہندو یوا تنظیم ، کئی دیگر مذہبی تنظیموں سے بھی ہے وابستہ

ریاست میں فرقہ وارانہ کشیدگی کو لے کر بہار حکومت مسلسل اپوزیشن کے نشانے پر ہے ۔ اب اورنگ آباد تشدد کے اہم ملزم انل سنگھ کے پولیس حراست سے فرار ہونے کے بعد حکومت کی مشکلیں مزید بڑھ گئی ہیںانل سنگھ ہندو یووا سمیت کئی مذہبی تنظیموں سے وابستہ ہے ۔ پولیس نے اس کو 26 مارچ کی رات کو اورنگ آباد میں رام نومی کے جلوس کے دوران تشدد بھڑکانے کے الزام میں گرفتار کیا تھا ، مگر ایک روز بعد یعنی 27 مارچ کی شام کو پولیس کو چکما دے کر وہ فرار ہوگیا ۔ انل سنگھ شروع سے ہی لڑائی جھگڑا کرنے والا رہا ہے اور پہلے بھی کئی معاملات میں انتظامیہ کے خلاف محاذ آرائی کرچکا ہے۔ خاص کر مذہبی معاملات میں انل سنگھ کافی کھل کر سامنے آتا تھا۔انل سنگھ اورنگ آباد شہر کے نزدیک کنڈا گاوں کا رہنے والا ہے اور اس کا شہر میں بھی گھر اور مارکیٹ کمپلیکس ہے ۔ انل سنگھ مالی طور پر کافی مضبوط ہے اور مذہبی تقریبات میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتا رہا ہے۔غور طلب ہے کہ اورنگ آباد تشدد کے معاملہ میں ابھی تک 170 افراد کو گرفتار کیا جاچکا ہے۔ جبکہ ڈی جی گپتیشور پانڈے کے ذریعہ تشکیل دی گئی دو ٹیموں کی چھاپہ مار ی کی کارروائی جاری ہے۔