بہار رابطہ کمیٹی کا فیصلہ، جہیز والی شادیوں میں نہیں پڑھائے گا کوئی نکاح

بہار رابطہ کمیٹی کا فیصلہ، جہیز والی شادیوں میں نہیں پڑھائے گا کوئی نکاح

جہیز کا خاتمہ خواتین کو بااختیار بنائےگا۔ جہیز لینے والوں کا سماجی بائکاٹ ہوگا اور عالم دین جہیز کی شادی میں نکاح نہیں پڑھائیں گے۔ پٹنہ میں منعقد بہار رابطہ کمیٹی کے پروگرام میں مشترکہ طور پر مذہبی تنظیموں کے ذمہ داروں نے اس بات کا اعلان کیا۔ جہیز، نشہ اور ناخواندگی کو سماج کا دیمک بتاتے ہوئے اس سمت میں کام کرنے کی لوگوں سے اپیل کی گئی۔خواتین کو بااختیار بنانے کے لفظی نعروں سے ہی خواتین کی ترقی ہوگئی ہوتی تو لڑکیوں کو شادی کے لئے انتظار نہیں کرنا پڑتا۔ جہیز کے خاتمہ کی بات کی جاتی ہے لیکن اس پر عمل نہیں کیاجاتا ہے۔  ایسے میں خواتین کی ترقی کا نعرہ ہمیشہ بے معنی رہا ہے۔ بہار رابطہ کمیٹی کے زیراہتمام جہیز، نشہ مخالف اور تعلیمی کانفرنس کے نام سے ایک پروگرام کا انعقاد کیا گیا جس میں سبھی مسلک کے مسلم تنظیموں کے ذمہ داران نے شرکت کی اور جہیز کے خلاف مورچہ کھولنے کا اعلان کیا۔ نشہ، جہیز اور ناخواندگی کو سماج کا دیمک بتاتے ہوئے مسلم تنظیموں نے اس پر کام کرنے کی لوگوں سے اپیل کی۔پروگرام میں امارت شرعیہ بہار، خانقاہ منعمیہ، جماعت اسلامی، مجلس علماء خطبہ امامیہ کے ساتھ ہی الگ الگ مسلک کے لوگوں نے شرکت کی۔ رابطہ کمیٹی نے مسلم تنظیموں سے اپیل کی کہ جس شادی میں جہیز کا معاملہ ہو اس شادی کا پوری طرح سے بائیکاٹ کیاجائے۔ رابطہ کمیٹی کے پروگرام میں مسلمانوں کی تعلیمی مشکلوں کو حل کرنے کے لئے بھی مستعدی سے کام کرنے کا بھروسہ دلایا گیا۔ رابطہ کمیٹی کے مطابق حکومت کی اسکیموں سے فائدہ پہنچانے کے ساتھ ساتھ غریب آبادی کے درمیان تعلیم کو عام کرنے کے لئے رابطہ کمیٹی خاص طور سے کام کر رہی ہے۔