دہلی اور میرٹھ کے درمیان دوڑے گی162کلومیٹر کی رفتار سے ٹرین

دہلی اور میرٹھ کے درمیان دوڑے گی162کلومیٹر کی رفتار سے ٹرین

 دہلی اور این سی آر میں رہنے والے لوگوں کو روزمرہ کی زندگی میں تقریبا ہر روز ٹریفک سے گزرنا پڑتا ہے۔ کبھی جام میں پھنس کر گھنٹوں یوں ہی نکل جاتے ہیں تو کبھی آفس تک پہنچنا بھی مشکل ہوجاتا ہے ۔ روز مرہ کی اسی پریشانی سے نجات دلانے کے لئے حکومت نے ایک نئی اسکیم کو منظوری دی ہے۔ نیشنل کیپٹل ریجن ٹرانسپورٹ کارپوریشن نے طویل عرصے سے زیر التوا دہلی غازی آباد - میرٹھ ریپڈ ریل ٹرانزٹ کوریڈور کو منظوری دیدی ہے۔ اب دہلی سے میرٹھ کا فاصلہ ایکسپریس ٹرینوں سے صرف 48 منٹ میں طے ہوجائے گا جبکہ نارمل ٹرینوں میں 60 منٹ کا وقت لگے گا۔

اس کوریڈور میں ٹرینیں 160 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلیں گی۔ سفر کو مزید آسان بنانے کے لئے ہوائی جہاز کی طرز پر 2/2 کی سیٹیں ہوں گی۔ ساتھ ہی ساتھ ہر ٹرین میں ایک کوچ بزنس کلاس کا ہوگا۔ ہر ٹرین میں 12 کوچ ہوں گے۔ یہ کوریڈور سرائے کالے خاں سے شروع ہوکر مودی پورم تک جائے گا۔ اس میں 60 کلومیٹر ریلویٹیڈ کوریڈور اور 30 ​​کلومیٹر انڈر گراؤنڈ لائن ہوگی۔

کوریڈور بنانے کا فیصلہ دس سال پہلے یو پی اے کے دور حکومت میں ہوا تھا۔ جب این سی آر کیپٹل ریجن پلاننگ بورڈ نے این سی آر 2032 کی منصوبہ بندی پر کام کرنا شروع کیا تھا۔ دہلی میرٹھ کی اس 92 کلومیٹر طویل لائن کی تعمیر پر 21902 کروڑ روپے خرچ ہوں گے۔ اس میں کل 17 اسٹیشن ہوں گے ، جس میں 11 ایلویٹیڈ اور 6 انڈر گراؤنڈ اسٹیشن ہوں گے۔ ایک تخمینہ کے مطابق یہ كوریڈور 2024 میں 7.91 ملین مسافروں کو لے جائے گا ، جو 2041 میں بڑھ کر 11.40 لاکھ ہو جائے گا۔ صاحب آباد-میرٹھ کے درمیان 38 کلومیٹر کی لائن جنوری 2023 تک تیار ہوگی ، تو 16.60 کلومیٹر طویل سرائے کالے خان-صاحب آباد لائن جنوری 2024 میں مکمل ہوگی۔ باقی بچ جانے 37.40 کلومیٹر والی میرٹھ جنوبی اور مودی پورم لائن جولائی 2024 میں مکمل ہوگی۔