پائیلٹ نے غلطی سے اغوا کا الارم بجادیا۔ منیلا ایئر پورٹ پرافرتفری

پائیلٹ نے غلطی سے اغوا کا الارم بجادیا۔ منیلا ایئر پورٹ پرافرتفری

منیلا21/ستمبر(ایجنسیاں): حاجیوں سے بھری ہوئی سعودی عربین ائرلائن کو اُس وقت منیلا ائیرپورٹ پر محافظ دستوں نے گھیر لیا جب طیارے کے پائلٹ نے طیارہ اغوا ہونے کا الارم بجادیا۔ بتایا گیا ہے کہ اس طیارے میں 410 حاجی سوار ہیں اور 17 ہوائی جہاز کا عملہ ہے۔ سعودی عربیہ سے شائع ہونے والا معروف انگریزی اخبار عرب نیوز کی اطلاع کے مطابق  سعودی عربین ائرلائن کے اسٹاف میں سے ایک نے غلطی سے طیارہ ہائی جیک ہونے کا الارم دو مرتبہ بجا دیا اورطیارہ اترتے ہی ایئر پورٹ کے افسران کے اشارے پر محافظ دستوں نے فوری حرکت کرتے ہوئے طیارے کو چاروں طرف سے گھیر لیا۔

منیلا ایئر پورٹ افیسر عیدّی مونریال نے بتایا کہ فلائٹ ایس وی 872 جو جدہ سے پرواز کرکے منیلا کی طرف آرہا تھا32 کلومیٹر کی دوری پر اس طیارے سے خطرے میں گھرے ہونے کا الارم موصول ہوا۔ایئر پورٹ کے افسران نے جب اس خطرے کی تصدیق کرنی چاہی تو طیارے کے پائلیٹ نے طیارہ اغوا ہونے کا الارم دوبارہ بجاتے ہوئے اس کی تصدیق کردی۔

البتہ یہ بات معلوم نہیں ہوسکی کہ دوسری بار بھی غلط الارم دے کر خطرے کی تصدیق کیسے کی گئی۔ کیونکہ ایئر پورٹ کنٹرول ٹاور اور طیارے کے پائلیٹ کے درمیان جو پیغامات بھیجے گئے ہیں اس میں بین الاقوامی طور پر منظور شدہ کوڈ کا ہی استعمال کیا گیا ہے۔ کہاجاتا ہے کہ بعد میں پائلیٹ نے بتایا کہ طیارے کو ہائی جیک کیے جانے کا پروسیس شروع ہونے کا بٹن غلطی سے دب گیا تھا۔ مگر اس یقین دہانی کے باوجود ایئر پورٹ کے ذمہ داران نے فوری طور پر بحرانی کیفیت سنبھالنے والی کمیٹی کو طلب کرلیا۔ مسٹر مونٹریال کا کہنا تھا کہ ہم سیکیوریٹی کے ساتھ کوئی کھلواڑ کرنا نہیں چاہتے۔ ہم نے اس خطرے کی گھنٹی والی کال کو محض غلطی کہہ کر نظر انداز نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ خطرے کی گھنٹی بجانے والا طیارہ بوئنگ 777جیسے ہی ایئر پورٹ پر لینڈ ہوا، پہلے محافظ دستوں نے اس کو چاروں طرف سے گھیر لیا پھر بعد میں اس کے مسافروں کو باہر نکلنے دیا گیا۔مسافروں کا کہنا تھا کہ طیارے کے اندر حالات بالکل ہی نارمل تھے۔ ان کے رشتہ داروں کے فون کالس سے ہی انہیں پتہ چلا کہ شاید ان کا طیارہ ہائی جیک کیا گیا ہے۔

سعودی ایئر لائن جو 71سال سے ہوا بازی کے میدان میں ہے۔اور اب 119 ہوائی جہازوں کو آپریٹ کرتی ہے۔اس نے ٹویئٹر پر کہا ہے کہ ہوا میں اڑتے ہوئے مذکورہ طیارے میں اغوا کیے جانے کا جھوٹا الارم بج گیا تھا۔جبکہ فلیپائن کی شہری ہوابازی کے محکمہ نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ وہ اس واقعہ کی پوری تحقیقات کریں گے۔ اگر یہ ایک انسانی غلطی ہوگی تب بھی اس کا ارتکاب کرنے والے پائلیٹ پر مناسب پابندیاں اور جرمانہ ضرور لگایا جائے گا۔

اس سے پہلے فلیپائن کی حکومت نے فروری میں کہا تھا کہ منیلا میں سعودی سفارتخانہ اور سرکاری سعودی ایئر لائن کو درپیش ممکنہ خطرات کو دیکھتے ہوئے اس نے ان دونوں کے لئے سیکیوریٹی بڑھادی ہے۔ساتھ ہی سعودی طیاروں میں لادے جانے والے لگیج پر نظر رکھنے کے لئے اس نے زائد ہتھیار بند افسران کو متعین کردیا ہے۔ اس صورتحال کے پس منظر میں یہ پہلا موقع ہے جبکہ اغوا کا جھوٹا الارم بجنے کی وجہ سے سیکیوریٹی افسران کو حرکت میں آنا پڑا تھا۔