ریپ کرنے والے کو اتنا مارو کے کھال اتر جائِے: اوما بھارتی

ریپ کرنے والے کو اتنا مارو کے کھال اتر جائِے: اوما بھارتی

آبی ذخائر کی وزیر اوما بھارتی کا کہنا ہے کہ انھوں نے ریپ کے مشبہ ملزم کو زندگی کی بھیک مانگنے پر مجبور کیا اور پولیس سے اس پر تشدد کروایا۔ آبی ذخائر کی وزیر اوما بھارتی کا کہنا کہ انھوں نے اس شخص پر الزام عائد کرنے والوں سے کہا تھا کہ وہ اسے الٹا لٹکا ہوا دیکھیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ ’ریپ کرنے والے کو متاثرین کے سامنے تشدد کا نشانہ بنایا جانا چاہیے یہاں تک کہ وہ معافی مانگنے لگے۔‘

اوما بھارتی نے یہ بیان اتر پردیش میں ایک مقامی سیاستدان کے لیے انتخابی مہم کے دوران دیا۔ انھوں نے جولائی سنہ 2016 کے ایک غیر معروف کیس کا ذکر کیا جس میں ماں اور بیٹی کو بلند شہر میں گینگ ریپ کیا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ اتر پردیش کی حکومت متاثرین کو انصاف فراہم کرنے میں ناکام رہی۔ اطلاعات کے مطاوق وزیر کا کہنا تھا کہ ’ریپ کرنے والوں کو الٹا لٹکا کر اتنا مارنا چاہیے کہ ان کی کھال اتر جائے۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ ’ان کے زخموں پر نمک اور مرچ ڈالنی چاہیے تاکہ ان کی چیخیں نکلیں۔‘ان کا کہنا تھا کہ جب وہ سنہ 2003 اور 2004 کے دوران مدھیہ پردیش کی وزیرِ اعلیٰ تھیں تو انھوں نے ایسا ہی رویہ رکھا۔ ان کا کہنا تھا ’میں پولیس والوں سے کہتی کہ ریپ کرنے والوں کو الٹا لٹکائیں اور اتنا ماریں کہ روئیں۔ میں عورتوں سے کہتی کہ وہ تھانے کی کھڑکیوں سے یہ منظر دیکھیں۔‘

انھوں نے ہجوم سے خطاب میں کہا ’جو کوئی پولیس والا اعتراض کرتا تو میں کہتی اگر یہ لوگ شیطان کی طرح برتاؤ کریں گے تو انہیں انسانوں جیسے سلوک کا حق نہیں۔‘ اوما بھارتی حکمراں بھارتیا جنتا پارٹی کی رکن ہیں اور ماضی میں بھی اپنے متنازع بیانات کی وجہ سے خبروں میں آ چکی ہیں۔انڈیا میں عورتوں کے خلاف سنہ 2012 میں ایک طالبہ کے ساتھ گینگ ریپ کے بعد توجہ کا مرکز بنے۔